گم شدہ

“گم شدہ”

تلاش زندگی کے راستوں کی،

بکھرتا ہوا میں،

تپتا راستہ،

چھاوں کی جستجو،

اور تمہاری خوشبو،

سمٹ گیا میں،

چل پڑا تپتی راہ پر،

بے چینی تمام ہوئ،

اور تمہاری خوشبو،

ہاں تمہاری خوشبو،

کہیں پیچھے چھوڑ آیا میں،

منزل سامنے تھی،

قدم لڑکھڑا گئے،

تنہائ کا خوف،

اور تم گم شدہ،

بکھر گیا میں،

تپتے راستے میں،

چھاوں کی جستجو میں۔

۳۱ مارچ، ۲۰۱۸ کی رات۔

نیو ہاسٹل، گورنمنٹ کالج۔

Advertisements

Life is the name of journey from hopless nights to pleasent mornings

آو عشق سیکھتے ہیں

آو دسمبر کی سرد رات میں،کچھ باتیں کریں،

کچھ جھوٹ تم بولو،

کچھ تعریفیں میں کروں،

آو باغ میں بیٹھ کر،

باتیں پرانی چھیڑتے ہیں،

بچپن کے قصوں کو یاد کر کے روتے ہیں،

پھر بچھڑ جانے کے غم کو چپ کرواتے ہیں،

آو رات کے پچھلے پہر تمہیں بے حجاب کرتے ہیں،

ٹھنڈی ہوا سے بکھرتی تمہاری زلفوں سے کھیلتے ہیں،

تمہاری آنکھوں سے دھوکا کھاتے ہیں،

تمہارے چہرے کو چاند کی روشنی میں نہلاتے ہیں

آو اس چاندنی رات میں،

عشق سیکھتے ہیں،

چاند کو گود میں لیتے ہیں،

پھر توڑ دیتے ہیں۔

Sometime we need…

It was morning of December. Sun was veiling behind the clouds. We were moseying on the track of Lawrence garden. Our faces were hiding behind the smoke which was producing by our stomachs. I don’t know why she called me on this bone freezing morning. I was so mad that I walked from Government College to Lawrence garden. And now she was quiet for last twenty minutes. After sometime her lips showed movement and I listened her frail and tender voice:“Have a cup of tea?”

“Sure”


She was smiling. She always had diamond-like shine in her eyes. We sat on a bench. Like always she took a kettle with herself and I was with couple of tea-cups. I put up cups on the bench. She loosen the cap of kettle and poured tea into cups. Steam of hot tea made my mouth full of water. I took out sooper biscuit from my pocket, dip into the tea and crunched under teethes. My stomach was empty like beggars bowl.

She was sipping tea with “surrp…surrp” sound and gazing at poplar tree.

“Today tea is delicious”

I knew tea did not had sugar in it.

She stopped sipping. Looked at me and smiles:

“Our tea did not have sugar, how it can be delicious?”

“Sometimes sugar-free tea is good for health”

“And specially when you consciously did not pour sugar, just to give reason for starting conversation”

Ours eyes matched at the same time with big smile.

Now we were taking last sips of tea. We finished our tea. I put in cups into my small bag. She hold kettle in her hand.

We were walking towards the Quaid-e-Azam library.

“Your new jacket is quiet nice”

I asked while noticing her dark purple jacket.

“Thank you” she smiled and continued:

“Last Sunday me and my mother went for shopping. It was sale in Kareem block. So, my mother asked me to buy a jacket”

“Nice. I wish I also have mother who take care of me. You are lucky”

I asked while gazing at ground.

“Well. What about me?. I lost my father. But you have your father.” She was staring at me.

“Yes. This is human nature. And we are living with this nature. What you have did not matter for you but the thing you don’t have has more value”

I was smiling and looking unconsciously at sky with water drops in my eyes.

She noticed, smiled and asked:

“Oh, you have new wrist watch?”

“My father gifted me on my birthday”

“It is beautiful” she continued:

“Your problems are settled down with landlord?”

I laughed “Actually, these are not problems. It is now routine”

She shakes her head down. She was thinking something. I noticed that she was sad.

Sun was appeared from clouds. Sunshine was passing through the branches of trees. Birds were thanking God for beautiful morning. Cold breeze were saying good morning to us.

For enjoying sweet sunshine we sat on Quaid-e-Azam library’s stairs.

I think she was worried about her studies.

“How are your studies going?”

“They are good. I topped this semester”

“Excellent. Than why are you sad today?”

“My husband is not giving me divorce. Even he has left me six month ago”

Her face became red.

“Oh, than now?”

“I want to be free. My daughter is always asking about her father”

She said in quaveringly voice and her tears slipped on her face.

I gave him a tissue paper. She cleared her face and rolled tissue paper in her hand.

“Everything will be okay. We will find your husband. I will help you in taking divorce. Just be relaxed. Accept these problems. Problems are part of life. Everyone has to face these problems in different situations. These problems are just for time being. Move on and concentrate on your daughter’s future.”


I put my arm on her shoulder. She wiped her nose with tissue paper and tried to smile.

No! No! I don’t like her. I hardly knew her. We were just university fellow. She used to called me once a month, when she became upset. We were strangers for each other. Yes, I liked her voice. Her voice had pain. Her voice attracted me and enforced me to meet her.

“Your relatives are still cutoff from you?”

She asked question just to change the topic.

“Yes, they will, until we go prosperous again”

She moved her face towards me, looked into my eyes and smiled:

“You know what sometimes we need a deep hugger. A true friend. Who does not discourage us. Appreciate our feelings. Give us support in every situation of life”

“And sometimes we need a person who clean our tears. Make us happy with his jokes. We need a person who talk with us in late moonlight nights. A person with which you can go to long drives. A person who can understand your feelings even you don’t tell them. A person with which you spent all day and didn’t talk and you feels that you talk with him all day. Tell me one thing, even they exist?”

I just go emotional.

“They exist in form of your parents. If your parents are not too frank than your best friend. If you don’t have best friend than your best teacher. If you don’t have teacher than tell to yourself. Become a friend of yourself and write it down your emotions and problems. And it is a sign of good writer. God will help you!” She smiled as usual.

She shared problems with me. She will be relaxed till next month.
Now she was ready to go home.

Sunlight was going hard. We both were still sitting on the stairs of library. She didn’t want to leave this conversation but her mother and daughter were alone at home. She correct her tress with hand. Covered her head with dupatta. Carried kettle and walked away towards the garden’s gate.

I was still thinking that we need a person. Writing a diary will not help and how a God will reply us instantaneously?. We are humans. We need a human to share our emotions.

Traffic was increased on roads. Retired persons were sitting on the benches and reading newspaper. Some aged men trying to be fit till their death. Teenagers were on date after missing their classes from college. I saw a gardener’s newly marriage couple. They were smiling after every glance on each other. Man gardener pick a flower from flowerpot and put into his pocket. I am sure he will give this to his wife. Students were coming to library. Most of them were doing preparation for competitive exams.

I lighten-up my matches, burnt my cigarette and walked towards nowhere. I was thinking that sometimes we need…

میرا افسانہ

اسے جب پھلی بار دیکھا تھا تو میری عمر ایک دن اور کچھ گھنٹے تھی۔ وہ اور میں ایک ہی دن پیدا ہوئے تھے۔ اس کے والدین ہمارے گھر بیٹا پیدا ہونے کی خوشی میں مبارک باد دینے آئے تھے۔ ساتھ ہی اپنی بیٹی کو بھی لیتے آئے جو اسی دن پیدا ہوئ تھی۔ بقول میرے بڑے بھائ کے جب وہ اپنی نازک آواز میں روتی تو میں بھی رونے لگتا۔ یہ مقابلہ اس وقت تک چلتا رہا جب اُس نے اپنی والدہ محترمہ کی گود گیلی نہ کر دی۔ مجبوراً اُنہیں اجازت لینی پڑی۔ اُن کا گھر پڑوس میں ہی تھا۔یہ تھا ہماری پہلی ملاقات کا دن۔

ہماری تاریخ پیداءش ایک ہی ہے، ۲۷ دسمبر، لیکن ہمارے مزاج میں زمین آسمان کا فرق ہے۔ وہ ہمیشہ صبح سات بجے ہی روتی ہی کیونکہ اُسے پتہ ہے کہ اس کی امّی ناشتہ سات بجے ہی بناتی ہیں۔ مجھے بیماری ہے کہ جیسے ہی میری امیّ سوتی ہیں میرے اندر بغاوت اٹھتی ہے میں بھدی آواز میں راگ الاپنے لگتا ہوں۔

وہ شروع سے ہی سلجھی ہوئ بچی تھی۔ اس کے والدین اس کے ساتھ انگریزی بولتے۔ اُس کے والد کا ریستوران تھا۔ میرے والدین بی-اے پاس تھے۔ میرے والد سرکاری اسکول میں استاد تھے۔ گھر کا ماحول خالص پنجابی تھا۔

ہمارے والد آپس میں بڑے اچھے دوست تھے۔ اُنہوں نے ہمیں ایک ہی اسکول میں داخل کروا دیا۔ وہ بہت لاءق طالبہ تھی۔ اپنا گھر کا کام کر کے آتی۔ مجھے سمجھ ہی نہیں آتا تھا کہ ٹیچر کیا کہتی ہے، کیونکہ وہ سارا وقت انگریزی میں بولتی۔ اور میں انگریزی میں بلکل ناکارہ تھا۔

میں بہت خاموش طبع بچہ تھا۔ ہر وقت ڈرا ڈرا رہتا تھا۔ میں اپنی دنیا گم میں رہتا۔ میں زیادہ خوبصورت نہیں تھا۔ چھوٹی چھوٹی آنکھیں، پچکا ناک، موٹے ہونٹ، گہرا سانولا رنگ اور نحیف جسم۔

خوبصورتی میں میرا اُس کے ساتھ کوئ مقابلہ نہیں تھا۔ اس کی بڑی روشن آنکھیں، بڑی پیشانی، سفید رنگ اور وہ گول مٹول سی گڑیا تھی۔

ہمارا اسکول پچھلی گلی میں تھا۔ ہم روز صبح مل کر اسکول جاتے۔ وہ لنچ میں ٹوسٹ لے آتی۔ میں چینی والا پراٹھا لے آتا کیونکہ میری امّی چاہتی تھی کہ میں موٹا ہو جاوں۔

ہم شام کو مٹی کے گھر بناتے، جھولا جھولتے، اپنی گھر کی دیواروں پر لکیریں کھینچ کر اپنے فن کا مظاہرہ کرتے، مٹی پر بیٹھ کر اپنے کھلونوں سے کھیلتے، کھیلتی تو وہ تھی، میں تو صرف اُسے دیکھتا رہتا تھا، گڈے گڈی کی شادی کراواتے، پھر شرما جاتے، پھر ہنستے، ایک دوسرے کے پیچھے بھاگتے۔ عصر کے وقت ہم آئسکریم کھاتے۔ ہم روز ایک ہی آئسکریم کھاتے۔

                            ***************************************

ہم دونوں بڑے ہو رہے تھے۔ ہم اب نویں جماعت میں تھے۔ میں اس سے گھبراتا تھا۔ میرے سامنے وہ آتی تو میرے سے بولا نہ جاتا۔ اس کی خوبصورتی میں ایک رعب تھا۔ جو مجھے احساس کمتری کا شکار کر جاتا۔ لوگ اس کا چہرا چومتے، اسے پیار کرتے۔ مجھے صرف دیکھ مسکرا دیتے۔ مجھے اس پر غصہ آتا، اور اپنے آپ سے وعدہ کرتا کہ آئندہ اس سے نہیں کھیلوں گا۔ لیکن اگلے دن اس سے کھیلنے چلا جاتا۔ بدصورت لوگوں کی کمزوری حسن ہی ہوتا۔ اور غریب انسان ویسے بھی بہت حساس ہوتا ہے۔ لیکن وہ میرا خیال بھی رکھتی۔ میرا اسکول کا کام بھی کر دیتی۔ چاکلیٹ بھی لے دیتی۔ مجھے ایک ہمدرد مل گیا تھا۔ حساس انسان کو اس زیادہ کیا چاہیے۔ گھر میں ہم چھ بہن بھائ تھے۔ وہاں ہمارے والدین کا پیار بٹ چکا تھا۔

قیامت تو اس وقت گری تھی، جب اس کے والدین ہمارے گھر آئے اور بتا کر گئے کہ وہ لوگ امریکہ جا رہے ہیں۔ مجھے لگا جیسے کسی نے میرے اندر سے روح نکال لی ہو۔ اب میں صرف گوشت کا لوتھڑا ہوں جو کسی وقت بھی گر سکتا ہے۔ میں بیڈ پر لیٹا لیٹا پاوں ہلاتا رہا۔ سوچتا رہا کہ کیا ہو گا؟ میں کدھر جاوں گا؟ رات کو مجھے گیلے سرانے پر سونا پڑا۔ میں اگلے دن اس کے گھر اس سے ملنے گیا۔ وہ لوگ بہت خوش تھے۔ وہ سب لوگ سامان باندھ رہے تھے۔ وہ سب سے زیادہ خوش تھی۔ وہ مجھے امریکا کی تعریفیں سنا سنا کر پکا رہی تھی۔ مجھے اس پر غصہ آیا اور وہاں سے بھاگ اُٹھا۔ مجھے پتہ نہیں تھا کہ کس طرف جا رہا ہوں۔ بس بھاگتا رہا۔ بھاگتا رہا۔ میرا رکنے کا دل نہیں کر رہا تھا۔ تھک کر ایک پارک میں گر پڑا۔ میرا دل کر رہا تھا کہ اتنا اونچا رووں کہ میرا دل پھٹ جائے۔ ایسا لگا کہ میرا سب کچھ ختم ہو رہا ہے، میں کسی اندھے کنویں میں گر رہا ہوں۔ جہاں سے واپسی ممکن نہیں۔ “یہ مجھے کیا ہو گیا ہے؟” میں نے اپنے آپ سے سوال کیا۔ “کیا اس دنیا میں ایک شخص ہے، کیا ایک شخص کے نہ ہونے سے زندگی ختم ہو جاتی ہے؟”۔ میرے پاس جواب نہیں تھے۔ صرف آنسو تھے۔

               ***************************************

چار سال بعد جب میں تیہرویں جماعت میں دوسری دفعہ فیل ہوا تو والد صاحب نے گول میز کانفرس بلائ۔ ابو نے قرار داد پیش کی کہ مجھے پڑھائ چھوڑ کر نوکری کر لینی چاہیے۔ قرارداد کو گھر والوں متفقہ طور پر منظور کیا۔ میں مہنگے ریستوران میں “ڈیلیوری بوائے” بھرتی ہو گیا۔ ************************

وہ دسمبر کی ایک سرد رات تھی۔ میں اپنے “آفس” کے صوفے پر سو رہا تھا۔ میرے آفس کولیگ نے مجھے آواز دی “اوئے اُٹھ آرڈر آیا ہے” میں ہڑبڑا کر اُٹھ بیٹھا۔ جلدی جلدی اُٹھ کر پتہ لکھا۔ سکوٹر سٹارٹ کیا اور اپنی راہ پر چلا پڑا۔ جب میں نے پوش علاقے کے ایک فلیٹ پر پہنچ کر گھنٹی بجائ تو جس زہرہ جبیں نے دروازہ کھولا وہ حورین فاطمہ تھی۔ دروازہ کھلنے پر میں بوکھلا گیا۔ یہ بھول ہی گیا کہ پیزا دینے آیا ہوں۔ حیرت کی انتہا اس وقت نہ رہی جب اس کے لب ہلے اور میں نے اپنا نام سنا

“شادان آپ؟”

“جی یہ پیزا آرڈر کیا تھا آپ نے” میرے سے صرف یہی بولا گیا۔

“آپ شادان ہیں نا؟”

جی، یہ پیزا لے لیں” میری ٹانگیں اور زبان دونوں لڑکھڑا” رہی تھی۔ وہ مسکرائ۔ وہ حیران اور پریشان دونوں تھی۔ اس نے پیزا لیا اور اندر چلی گئ۔

                  ******************************************

وہ پھر آ گئ تھی۔ میں اپنی دنیا میں گم ہو چکا تھا۔ میں نے اسے بھلانے کیلئے چھ سال لگائے تھے۔ میری تعلیم ختم ہو چکی تھی۔ ااس کی آنکھیں شفاف آبشار کی طرح تھیں۔ جو بھی دیکھتا اس میں گر جاتا۔ میں بھی گر گیا تھا۔

میں نے اسے اپنے دل کے حال کا بتانے کا فیصلہ کیا۔ میں نے اس کی یونیورسٹی کا پتہ کیا اور اس سے ملنے چلا گیا۔

وہ مجھے وہاں دیکھ کر حیران ہو گئ۔ میرے میں جتنی طاقت تھی، میں نے وہ جمع کی اور اس سے کہا

“حورین آپ سے ایک ضروری بات کرنی ہے، ہم کہیں مل سکتے ہیں؟”

پہلے وہ مسکرائ پھر بولی ” جو بات کرنی ہے یہیں کر لیں”

“نہیں بہت لمبی بات کرنی ہے” میری آنکھیں نیچے تھیں اور سانس پھولا ہوا تھا۔

” آپ گھر آ جایں ” وہ بولی۔

” ہاں یہ ٹھیک ہے، پھر کب آؤں؟”

” ہاں، بے شک آج شام کو آ جاؤ” وہ مسکرا کر بولی۔

                                 ****************************************

شام کو میں نے اس کے پسند کی کالے رنگ کی شرٹ پہنی۔ جب ان کے گھر کی گھنٹی بجائ تو آنٹی نے دروازہ کھولا۔ وہ پہچان نہ سکیں۔

“کون؟، ہاں جی کیا کام ہے؟”

“جی میں شادان، ماسٹر عنایت اللہ کا بیٹا، ہم آپ کے ہمساے تھے۔”

“ارے تم، تم یہں کہاں، آؤ اندر آ جاؤ” اُن کو خوشی کے ساتھ حیرت بھی ہوئ۔

میں ان کے گھر میں داخل ہوا۔ انہوں نے مجھے ڈرائنگ روم میں بٹھایا۔ وہ چاے پانی کا انتظام کرنے چلی گئیں۔ میں اتنی دیر ان کے مہنگے صوفوں اور پردوں کو دیکھتا رہا۔ اتنی دیر میں آنٹی چاے لے کر آ گئیں۔ انہوں نے گھر کا حال پوچھنا شروع کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ وہ گھر کا چکر ضرور لگائے گیں۔ مجھے ان باتوں سے کوئ دلچسپی نہیں تھی۔ میری آنکھیں حورین کو ڈھونڈ رہی تھیں۔ باتوں کے دوران ہی وہ کمرے میں داخل ہوئ۔ اب میری نظریں ان کے مہنگے قالین پر تھیں۔ کیونکہ میں اس ددھیا مائل پیروں کو دیکھ رہا تھا۔ اس کی امی نے میرا تعارف کروانا شروع کر دیا۔

“ہاں، یہ آج یونیورسٹی میں ملے تھے، انہوں نے کوئ ضروری بات کرنی ہے”

آنٹی نے میری طرف حیرت سے دیکھا۔ میں ان کا سوال سمجھ گیا اور بولا

“آنٹی وہ کچھ ان کی یونیورسٹی کے بارے میں معلومات چاہیے۔”

” چلو ٹھیک ہے۔ آپ لوگ کرو باتیں۔ مجھے ہمسایوں کی طرف جانا ہے۔”

وہ چلی گئیں۔ پیچھے ہم دونوں اکیلے رہ گئے۔ مجھے پھر وہی بچپن والی گھبراہٹ شروع ہو گئ۔ سمجھ نہیں آ رہا تھا کہ کہاں سے شروع کروں۔

میں نے اس سے کہا ” آپ کو یاد ہے ہم لوگ ایک ہی محلے میں رہا کرتے تھے۔”

” ہاں، بڑی اچھی طرح یاد ہے” وہ مسکرا کر بولی۔ جیسے اسے کچھ بھی نہ بھولا ہو۔

” آپ کو یاد ہم ایک ہی اسکول جایا کرتے تھے۔”

” ہاں بھئ سب اچھی طرح یاد ہے۔ اسکول کے دن کس کو بھولتے ہیں” اس کی مسکراہٹ میں اضافہ ہو گیا۔ جیسے اب وہ کچھ سوچنے لگی تھی۔

” آپ کو یاد ہے ہم اکٹھے کھیلا کرتے تھے۔ میرے پاس وہ گڈا گڈی ابھی بھی پڑے ہوے ہیں”

“ہاں اچھی طرح۔ بڑا خوبصورت تھا ہمارا بچپن” اب اس کی آنکھوں میں سوال تھا کہ اس میں کام کی بات کہاں ہے۔

“دراصل بات یہ ہے کہ۔۔۔” میں رک گیا۔ کیا بولوں؟ وہ میرے بارے میں کیا سوچے گی، یہ گنوار کہاں سے آ گیا۔

“ہاں بولو” اس نے مسکراتے ہوے کہا۔ وہ میری گھبراہٹ شاید پہچان گئ تھی۔

” مجھے آپ بچپن سے اچھی لگتی ہو۔ یہ بات میں آپ سے کہ نہ سکا۔ کبھی موقع ہی نہ ملا۔ پھر آپ لوگ امریکا چلے گئے۔ آپ لوگ واپس کب آئے، مجھے نہں پتہ، آپ لوگوں نے بھی تو رابطہ نہیں کیا۔۔۔” میں بس اتنا ہی کہۂ سکا۔ میرے دل کی دھڑکن چلتے ہوۓ پنکھے سے بھی زیادہ ہو چکی تھی۔ میری سانس پھول چکی تھی۔ اس کا چہرہ کھلے کا کھلا راہ گیا۔ وہ مجھے بری طرح گھور رہی تھی۔ اس کے منہ سے صرف یہی نکل سکا ” ہیں، کیا ؟ ”

” ہاں حورین میں تمہیں بچپن سے چاہتا ہوں۔ لیکن احساس کمتری کی وجہ سے کچھ کہ نہ سکا۔ میں تمہارے قابل بلکل بھی نہیں ہوں۔ لیکن ان جذبات کا کیا کروں جو باہر آنا چاہتے ہیں۔ چھ سال سے میں ان جذبات کو سینے سے لگا کر سوتا ہوں۔ اگر میں یہ باہر نہ نکالتا تو یہ مجھے اندر سے دیمک کی طرح چاٹ جاتے۔ میں تو یہ امید بھی چھوڑ چکا تھا کہ تم سے ملاقات ہو گی۔ مجھے بس یہی کہنا تھا” میں آہستہ آہستہ بول رہا تھا۔ مجھے روتے روتے ہجکی لگ چکی تھی۔

وہ مجھے گھور رہی تھی۔ اس کا چہرہ لال ہو چکا تھا۔ یہ سمجھنا مشکل تھا کہ غصے سے یا شرم سے۔ اس نے ایک ایک لفظ پر زور دے کر بولا ” تمہیں شرم نہیں آتی، یہ کیا بیہودہ باتیں کر رہے ہو، وہ ہمارا بچپن تھا جو ہم نے مل کر گزارا تھا۔ تم کیا سمجھے کہ زندگی بھی ساتھ گزارنی ہے۔ اور تم ہو کون؟ تمہاری اوقات کیا ہے؟ یہ عشق و عاشقی جیسے گھٹیا کام ہمارے خاندان میں نہیں ہوتے۔ یہ تم جیسے لفنٹر کرتے ہیں۔ اور یہ تھی تمہاری بات، اتنا وقت ضائع کیا میرا، اب دفعہ ہو جاو”

وہ کھڑی ہو چکی تھی۔ اپنا ڈوپٹہ صحیح کر رہی تھی۔ میں اس کے سامنے سہما ہوا بیٹھا تھا۔ میری ناک سے ہلکا ہلکا پانی نکل رہا تھا۔ ” حورین میری ایک بات یاد رکھنا۔ اس معاشرے میں غریب سے زیادہ محبت کا بھوکا کوئ نہیں۔ میں وہ غریب ہوں جو محبت دینے آیا تھا۔ تمہیں اس کا پچھتاوا ضرور ہو گا۔ ” میں نے میز سے ٹشو اٹھایا، ناک صاف کیا اور باہر آ گیا۔

میں واپسی پر بہت پر سکون تھا۔ میں نے اظہار محبت کر دیا تھا۔ میں نے سوچا کیوں نہ اسے اپنی زندگی سے مکمل طور پر نکال دوں۔ اس مقصد کیلئے پہلے تو میں نے اپنا سارا سامان ایک کرایے کے مکان میں شفٹ کیا اور دوسرا

میرے پاس اس کی جو بھی یاد تھی اسے واپس کرنے کا فیصلہ کیا۔ میں نے ایک بیگ لیا۔ جس میں ہمارا گڈا گڈی، اس کے دیے ہوئے پینسل کلر اور میری سالگرہ پر دی ہوئ ڈائری شامل تھی۔

اگلے دن سکوٹر لے کر اس کے گھر پہنچا۔ گھنٹی بجائ۔ ملازمہ نے دروازہ کھولا۔ اندر بھیڑ جمع تھی۔ غور کیا تو رونے کی آوازیں آ رہی تھی۔ میں اور آگے بڑھا اور لوگوں کے قریب ہو گیا۔ پنجوں کے بل کھڑے ہو کر دیکھا بیڈ پر آنکھیں بند کیے حورین نظر آئ۔ آنٹی اسے گلے لگا کر رو رہی تھیں۔ مجھے ارد گرد کی آوازیں آنا بند ہو گئیں۔ میں جہاں تھا وہیں گر گیا۔ میری ریڑھ کی ہڈی میں سرد لہر دوڑ گئ۔ میرے سر میں چونٹیاں چل رہیں تھیں۔ پیروں میں سے جان نکل رہی تھی۔ مجھے کچھ یاد نہیں پھر کیا ہوا۔ جب ہوش آیا تو بیڈ پر لیٹا ہوا تھا۔ ملازمہ میرے منہ پر پانی کے چھینٹے پھینک رہی تھی۔ میں نے اس کا ہاتھ پکڑ لیا اور پوچھا حورین کدھر ہیں؟”

اس نے روتے ہوئے کہا ” حورین بی بی آج صبح ہی فوت ہوئ ہیں” اور کمرے سے باہر چلی گئیں۔

میں بھی کمرے سے باہر آ گیا۔ ٹی۔وی لاونج میں خواتین درود پڑھ رہی تھیں۔ انکل نے مجھے آ تے ہوے دیکھ لیا۔ وہ مجھے دوسرے کمرے میں لے گئے۔ پہلے کچھ دیر روتے رہے پھر بولے ” حورین کو کینسر تھا۔ وہ کینسر کے آخری سٹیج پر تھی۔ وہ کسی وقت بھی اس دنیا سے جا سکتی تھی۔ مجھے پتہ ہے کہ تم حورین کو پسند کرتے ہو۔ وہ بھی تمہیں پسند کرتی تھی۔ بلکہ میں نے تو بچپن میں ہی تمہرے والد سے تم کو مانگ لیا تھا۔ لیکن ہم پھر امریکہ چلے گئے۔ وہاں پر پتہ چلا حورین کو کینسر ہے۔ اس کے پاس وقت بہت کم تھا۔ امریکہ سے آنے کے بعد ہم نے تم لوگوں سے ملنے کی کوشش نہیں کی کیونکہ پھر ہمیں رشتے کی بات کرنا پڑتی۔ اور مجھے روکا بھی حورین نے ہی تھا۔ حورین نے تمہیں ریستوران میں دیکھا۔ وہ چاہتی تھی کہ تم اس کی امید پر زندہ نہ رہو، اپنی نئ زندگی شروع کرو۔ اس نے تمہیں پیزہ آرڈر کیا۔ تا کہ تمہاری ملاقات ہو سکے۔ اور وہ تمہیں سمجھا سکے۔ جب تم نے اظہار محبت کیا تو اس نے تمہیں بری طرح جھڑک دیا۔ کیونک اگر وہ تمہاری زندگی میں آتی تو صرف چند دن کی مہمان ہوتی۔ وہ تمہاری زندگی تباہ نہیں کرنا چاہتی تھی۔ بیٹا بس اس کو معاف کر دینا۔ میری بس یہی التجا ہے تم سے” وہ روتے ہوئے کمرے سے باہر چلے گئے۔ میرے پاس بولنے کیلئے کچھ نہیں تھا۔ میں وہیں گم سم بیٹھا رہا۔ میں چل کر حورین کے کمرے میں چلا گیا۔ کمرہ خالی تھا۔ اس کے بیڈ کے ساتھ اس کا بیڈ منٹن ریکٹ کھونٹی پر لٹک رہا تھا۔ بک شیلف میں قراتلعین حیدر کے ناول پڑے تھے۔ کتابیں تو وہ بچپن سے ہی شوق سے پڑھتی تھی۔ اسے پولو کوئلو کا الکیمسٹ بہت پسند تھا۔ کہتی تھی کہ ایک دن ساری دنیا کی سیر کرے گی۔ میز پر اس کی ڈائری پڑی تھی۔ میں وہ پڑھنے کیلئے بیٹھ گیا۔ اس نے یہ ڈائری امریکہ جا کر لکھنا شروع کی تھی۔ ہر صفحے پر میرا کہیں نہ کہیں ذکر ضرور تھا۔ میری آنکھوں سے آنسو اس وقت چھلکے جب میں نے پچھلے دن کی تاریخ دیکھی۔ حورین لکھتی ہے: ” آج شادان ہمارے گھر آیا۔ بلآخر اس نے آج اظہار محبت کر ہی دیا۔ میں دماغی طور پر اس کیلئے تیار تھی۔ میں نے صاف منع کر دیا۔ میں تو مرنے والی ہوں۔ کم از کم وہ تو اپنی زندگی گزار سکے۔ وہ دلبرداشتہ تو ہو چکا تھا۔ مجھے امید ہے کہ وہ اب مجھے ملنے کبھی نہیں آئے گا۔ آخری ملاقات کہ وقت ہمری عمر بائیس سال اور کچھ گھنٹے تھی۔”

                          موت مجھ کو گوارا ہے لیکن

                           کیا کروں دم نکلتا نہیں ہے۔

WordPress.com.

Up ↑